انسداد تمباکو نوشی کے عالمی دن کے موقع پر ٹی ایچ کیو ہسپتال کلر سیداں میں سیمینار کا انعقاد کیا گیا

Pinterest LinkedIn Tumblr +

 کلر سیداں (نامہ نگار) انسداد تمباکو نوشی کے عالمی دن کے موقع پر ٹی ایچ کیو ہسپتال کلر سیداں میں سیمینار کا انعقاد کیا گیا جس میں ایم ایس ڈاکٹر علی سجاد قریشی سمیت میڈیکل آفسران اور پیرا میڈیکل سٹاف نے شرکت کی۔اس موقع پر ایم ایس ڈاکٹر علی سجاد قریشی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تمباکو نوشی پر سختی سے پابندی لگا کر ملک کے مستقبل کو صحت مند اور محفوظ بنایا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ سگریٹ نوشی نہ صرف ہماری صحت کو متاثر کرتی ہے بلکہ اس سے ہماری دماغی صحت پر بھی منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔سینئر میڈیکل آفیسر ڈاکٹر عمر فاروق نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سگریٹ پینے سے جہاں سانس اور دل کی بیماریاں لگ سکتی ہیں وہاں پھیپھڑے اور بہت سے دوسری اقسام کے سرطان ہونے کے زیادہ امکانات پیدا ہو جاتے ہیں۔ سگریٹ کا دھواں ان لوگوں کیلئے بھی خطرناک ہے جو سگریٹ کو منہ نہیں لگاتے۔سگریٹ پینے والا شخص اور اس کے اطراف میں رہنے والے افراد خاص طور پر بچے سب سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ڈاکٹر طارق قریشی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سگریٹ کی لعنت سے جان چھڑانے کیلئے ادویات کیساتھ ساتھ متبادل غذائی علاج بھی ضروری ہے۔سگریٹ نوشی کے نقصانات سے کون واقف نہیں دمہ،ٹی بی اور پھیپھڑوں کے ناکارہ ہونے سے لے کرکینسر جیسی جان لیوا بیماریوں تک سگریت نوشی کا انجام ثابت ہو سکتی ہیں۔تمباکو نوشی کرنے والے کے پھیپھڑے متاثر ہونے کے باعث اس کو کورونا لگنے کے امکانات 50 فیصد زیادہ ہوتے ہیں۔انہوں نے حکومت سے اپیل کی کہ وہ 18 سال سے کم عمر کے بچوں کو سگریٹ بیجنے پر پابندی کو یقینی بنایا جائے اور ملک کے مستقبل کو صحت مند اور محفوظ بنایا جائے۔بعد ازاں واک کا اہتمام بھی کیا گیا۔

Share.

Comments are closed.