ڈڈیال رٹہ بینک ڈکیتی کو ٹریس کر لیا گیا ڈاکوؤں کا 9 رکنی بین الصوبائی گروہ سرغنہ سمیت گرفتار 18 لاکھ دس ہزار روپے برآمد

Pinterest LinkedIn Tumblr +

ڈڈیال۔(ہارون محمود مغل)

ایس ایس پی میرپور کی پریس ریلیز۔۔

جبکہ وقوع میں استعمال ہونے والا اسلحہ ایک کلاشنکوف ، پانچ پستول ، دو کاریں اور دو موٹر سائیکل بھی برآمد تفصیلات کے مطابق ایس ایس پی ضلع میرپور عرفان سلیم نے ڈڈیال میں پریس نمائندگان کو پریس بریفنگ میں بتایا کہ مورخہ 19 اپریل 2021 کو صبح 10 بج کر 40 منٹ پر حبیب بینک رٹہ ڈڈیال میں پانچ مسلح ڈاکوؤں نے گن پوائنٹ پر بینک عملہ کو یرغمال بنا کر بینک سے 21 لاکھ روپے کیش لوٹ لیے اور بینک گارڈ سے 12 بور پمپ ایکشن جبرا” چھین کر فرار ہو گئے ضلع میرپور میں سال 2013 کے بعد بینک ڈکیتی کا یہ پہلا واقعہ تھا جو کہ پولیس کے لیے ایک بڑا چیلنج تھا اس کیس کو ٹریس کرنے کے لیے جدید طرز تفتیش اپنایا گیا اور ٹیکنیکل برانچ نے بہت محنت کی جس کے نتیجے میں یہ گمنام کیس ٹریس ہوا اس واقعہ میں ڈاکوؤں کا 9رکنی گروہ ملوث پایا گیا اورتمام ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا ہے جن میں

 1: بشارت حسین عرف چھاتو ولد محمد حسین قوم جٹ ساکن نیو افضل پور ترئیاں سہنسہ حال ملازم کوٹلی یونیورسٹی

 2: محمد فاروق ولد محمد شفیع قوم جٹ ساکن خیرووال چھمب  ضلع بھمبر حال جمال پورگلہار شریف کوٹلی

3: گلریز خان ولد نجیب اللہ خان قوم راجپوت ساکن درلیاگجراں تحصیل چڑہوئی حال ملازم کوٹلی یونیورسٹی

4: غضنفر قدیر ولد محمد قدیر قوم جٹ ساکن خیرووال چھمب ضلع بھمبر حال ہاؤسنگ سکیم کوٹلی

 5: ارسلان شاہ ولد قدرت شاہ قوم سیّد ساکن دھنواں ضلع کوٹلی

6: دانیال خان ولد اشفاق خان قوم کمال زئی ساکن شاہ فیصل کالونی کراچی

7:فواد اکرم ولد محمد اکرم قوم وڑائچ ساکن منڈی بہاوالدین

8: محمد خلیل ولد محمد اسحاق قوم جٹ ساکن سیالکوٹ

9:قیصر خان ولد خیر محمد قوم چاچڑ ساکن ضلع گھوٹکی سندھ شامل ہیں۔

ملزمان کے قبضہ سے بنک ڈکیتی کے دوران لوٹی گئی رقم میں سے 18لاکھ10ہزار روپے کیش اور بینک گارڈ سے چھینی گئی رائفل 12بور پمپ ایکشن بھی برآمد کر لی گئی ہے وقوع میں استعمال ہونے والا اسلحہ ناجائز 1کلاشنکوف، 5پستول کے علاوہ دو کاریں نمبر  MR-AH-629 وLEH-9260 اور دو موٹرسائیکل ہنڈا 125بدوں نمبر بھی برآمد کر لیے گئے ہیں دوران تفتیش انکشاف ہوا ہے کہ سرغنہ ملزم محمد فاروق 10سال سعودی عرب میں مقیم رہا ہے اس دوران وہ ایکسیڈنٹ کیس میں سعودی عرب جیل میں بند رہا جہاں ملزمان فواد، خلیل، دانیال، قیصرجو بھی دوکانیں لوٹنے کی وارداتوں سمیت مختلف جرائم میں ملوث ہوکر جیل میں بند تھے اس طرح ان ملزمان میں دوستی ہو گئی جیل سے رہا ہونے کے بعد ان پانچوں ملزمان کو سعودی عرب سے پاکستان ڈی پورٹ کر دیا گیا تھا وقوع سے قبل  ملزمان فواد، خلیل، دانیال، قیصر ملزم فاروق کے پاس کوٹلی آئے تھے اور وہاں بینک ڈکیتی کا پروگرام بنایاتھا اور پھر واقعہ کرنے سے تین روز قبل ملزمان بشارت، دانیال، قیصر ڈڈیال آئے ہیں جہاں ملزم بشارت نے حبیب بنک رٹہ برانچ میں اپنا ATMکارڈ استعمال کیا اور ساتھ ہی بینک کے سکیورٹی انتظامات کا جائزہ لے کر ٹارگٹ سیٹ کیا روز وقوع یہ گروہ مسلح ہوکر دو کاروں اور دو موٹرسائیکلوں پرکوٹلی سے ڈڈیال آئے اور رٹہ بائی پاس کے ملحقہ دربار بابا جیون شاہ پر رُکے دربار سے ملزمان فواد، دانیال، قیصر، خلیل اور ارسلان شاہ دو موٹر سائیکلوں پرواردات کرنے رٹہ بنک چلے گئے جبکہ بقیہ ملزمان دونوں کاروں پر اُنکی ریکی کرتے رہے اور واردات مکمل کرنے کے بعد براستہ نلہ ڈگار واپس کوٹلی چلے گئے اس اہم مقدمہ کی تفتیش کے دوران کیس کو ٹریس کرنے میں ٹیکنیکل برانچ کے علاوہ راجہ اظہر اقبال ایڈیشنل ایس پی میرپور، خواجہ عبدالقیوم DSPڈڈیال، عمار ڈار SHOڈڈیال، ذوہیب طاہر SHOسٹی، عدنان صابر SHOتھوتھال، اشتیاق علی سب انسپکٹر ڈڈیال نے اپنے اپنے عملہ کے ساتھ مختلف ٹیموں کی شکل میں کام کیا ہے ملزمان سے تفتیش جاری ہے اور مزید انکشافات کی توقع ہے پولیس لوگوں کے جان و مال اور عزت کی محافظ ہے اور اس فرض کی ادائیگی کے لیے دن رات کوشاں ہےضلع میرپور ایک  پُر امن ضلع ہے یہاں جرائم پیشہ افراد کا قلعہ قمع کیا جاتا رہیگاجرائم کے خاتمہ کے لیے عوام اور میڈیا کا تعاون ہمیشہ قابل ستائش ہے۔۔۔۔۔۔۔

Share.

Comments are closed.