حلقہ ایل اے ون ڈڈیال سیاسی درجہ حرارت عروج پہ شردرجن کے قریب اُمیدوار اسمبلی الیکشن میں حصہ لیں گےفاتحہ خوانیوں کا سلسلہ شروع ناراض ووٹروں کو منانے کی کوششیں تیز پا

Pinterest LinkedIn Tumblr +

ڈڈیال۔(بیورورپورٹ)نیوز کو کوریج دیں۔شکریہ۔

حلقہ ایل اے ون ڈڈیال سیاسی درجہ حرارت عروج پہ شردرجن کے قریب اُمیدوار اسمبلی الیکشن میں حصہ لیں گےفاتحہ خوانیوں کا سلسلہ شروع ناراض ووٹروں کو منانے کی کوششیں تیز پانچ سال منظر عام سے غائب رہنے والے عوام کو پھر سبز باغ دکھانے لگے اس حلقے میں اُمیدواروں کی لمبی لائن ہے اور پارٹیوں میں مُختلف اُمیدواروں نے ٹکٹ کے حصول کیلئے درخواست دے رکھی ہے پانچ سال عوام کو نو لفٹ کرانے والے اب عوام سے لفٹ مانگنے لگے عوامی مسائل پہ حکومت سمیت اپوزیشن خاموش تماشائی رہے پانچ سال پہلے ہوئی فوتگیوں پہ فاتحہ خوانیاں جاری نُ لیگ سمیت تحریک انصاف  دھڑے بندی کا شکار نظر آتی ہے نُ لیگ کے موجودہ وزیر چوہدری مسعود خالد سمیت راجہ شعیب عابد اور راجہ علی زمان بھی پارٹی ٹکٹ کے اُمیدوار ہیں اسی طرح تحریک انصاف کے بھی تین لوگوں نے پارٹی ٹکٹ کے حصول کیلئے درخواستیں دے رکھی ہیں جن میں نائب صدر تحریک انصاف آزاد کشمیر چوہدری اظہر صادق، چوہدری لیاقت ایڈوکیٹ، چوہدری خان ظفر خان شامل ہیں پیپلز پارٹی متحد نظر آرہی ہے سوائے چوہدری افسر شاہد ایڈوکیٹ کے جو سابق وزیر بھی ہیں کوئی اور پارٹی ٹکٹ کا اُمیدوار نہیں ہے مُسلم کانفرنس کے اُمیدوار چوہدری غلام ربانی برق نظر آ رہے ہیں جموں کشمیر یونائیٹد موومنٹ کے چوہدری پہلوان سجاد بھی اس بار الیکشن میں بھرپور حصہ لینے کیلئے میدان میں ہیں آزاد اُمیدوار چوہدری جہانگیر اکبر بھی اس بار آزاد حثیت سے حلقہ ایل اے ون ڈڈیال سے بھرپور حصہ لے رہے ہیں یاد رہے چوہدری جہانگیر اکبر میرپور شہر سے بھی آزاد حیثیت سے الیکشن لڑیں گے تحصیل ڈڈیال کے یہ واحد اوُامیدوار اسمبلی ہیں جو دو حلقوں سے الیکشن میں حصہ لیں گے اور بھرپور انتخابی مُہم بھی جاری رکھی ہوئی ہے چوہدری فیصل مشتاق بھی تحریک لبئیک کے ٹکٹ کے اُمیدوار ہیں اسی طرح نوجوان لیڈروقار مُغل آزاد حیثیت سے بھرپور انداز سے الیکشن میں حصہ لینے کیلئے پُر عزم ہیں جبکہ گُزشتہ الیکشن میں حصہ لینے والی دو شخصیات سابق وزیر راجہ واجد الرحمن اور موجودہ ایڈمنسٹریٹر چوہدری آفتاب فرزند ڈڈیال ابھی تک خاموش ہیں آئندہ آنے والے الیکشن میں ان شخصیات کا پلڑا جس جماعت میں جائے گا وہی جیتنے کی پوزیشن میں ہوگی حلقہ ایل اے ون ڈڈیال میں ن لیگ کے رہنما اور موجودہ وزیر خالد مسعود چوہدری ن لیگ کے ٹکٹ کے مضبوط اُمیدوار ہیں اپنے دور وزارت میں جہاں اپنے کارکنوں کو خوش رکھنے میں کامیاب رہے وہیں بہت سے کارکُن نالاں نظر آتے ہیں جہاں وزیر صاحب حلقہ ایل اے ون میں بہت سے ترقیاتی کام کرانے میں کامیاب ہوئے وہیں بہت سی یونین کونسلز میں ترقیات کام نہ ہونے کی وجہ سے ووٹرز اور سپورٹرز نالاں نظر آتے ہیں اور دوسری پارٹیوں کی طرف دیکھ رہے ہیں چوہدری خالد مسعود حلقہ ایل اے ون کا بڑا ووٹ بینک رکھنے والے اپنی پارٹی کے رہنماؤں کو بھی اپنے ساتھ مُتحد نہ رکھ سکے جس کی وجہ سے راجہ شعیب عابد جو کہ وائس چیرمین لوکل گورنمنٹ آزاد کشمیر ہیں اچھا خاصا ووٹ بینک رکھتے ہیں اور گزشتہ الیکشن میں چوہدری مسعود خالد صاحب کی جیت میں کلیدی کردار ادا کیا اسی طرح راجہ علی زمان بھی ایک بار ن لیگ کے ٹکٹ پہ الیکشن لڑ چُکے ہیں وہ بھی چوہدری مسعود خالد صاحب سے ناراض ناراض سے نظر آتے ہیں راجہ علی زمان بھی اچھا خاصا ووٹ بنک رکھتے ہیں یہ دونوں شخصیات بھی ن لیگ کے ٹکٹ کے حصول کیلئے کوشاں ہیں اور اگر پارٹی ليڈرشپ ٹکٹ چوہدری مسعود خالد کو دیتی تو اگر راجہ شعیب عابد اور راجہ علی زمان اُن کی سپورٹ نہیں کرتے تو ن لیگ حلقہ ایل اے ون میں بُری طرح ہار جائے گی اگر ن لیگ کا ٹکٹ راجہ شعیب عابد کو ملتا ہے تو دوسری دونوں شخصیات پارٹی کا فیصلہ مانتے ہوئے راجہ شعیب عابد کو سپورٹ کرتی ہیں تو زیادہ چانسز ہیں ن لیگ یہ سیٹ جیت سکتی ہے۔ اسی طرح ابھی تک پی ٹی آئی میں بھی جو نظر آ رہا ہے وہ یہ کہ تین اُمیدوار ٹکٹ کیلئے کوشاں ہیں اگر ٹکٹ چوہدری اظہر صادق کو ملتا ہے اور باقی دو اُمیدوار آزاد حیثیت سے اگر الیکشن لڑتے ہیں تو پی ٹی آئی مشکلات سے دو چار ہو سکتی ہے رہنما پی ٹی آئی  چوہدری اظہر صادق ابھی تک جو ووٹرز کی جوڑ توڑ کر رہے ہیں اُس میں انہوں نے پیپلز پارٹی کے کافی ووٹ توڑے ہیں جس کی وجہ سے چوہدری افسر شاہد صاحب کی مُشکلات میں اضافہ ہوا ہے دوسری طرف چوہدری اظہر صادق کی پارٹی میں کارکنوں کے ساتھ ناانصافیاں عروج پہ رہیں اور پی ٹی آئی ٹکٹ ہولڈر نے کارکنوں سے پانچ سال سرد رویہ رکھا جس کی وجہ سے پُرانے کارکن چوہدری اظہر صادق سے ناراض نظر آتے ہیں چوہدری افسر شاہد کے حق میں جو بات جاتی ہے وہ یہ ہے کہ پوری جماعت متحد اور منظم ہے کوئی گروپ بندی نہیں پیپلز پارٹی کے تمام رہنما چوہدری افسر شاہد کی قیادت میں مُتحد ہیں جس کا فائدہ یقینن پیپلز پارٹی اور افسر شاہد کو جائے گا اور وہ مُنظم طریقے سے الیکشن مہم چلا کر الیکشن جیت سکتے ہیں ٹیم چوہدری افسر شاہد گُزشتہ دور حکومت میں کئے گئے ترقیاتی کاموں کو خوُب پرچار کر رہی ہے اور چوہدری افسر شاہد نے جو کا تعلیمی میدان میں ڈدیال میں کئے اُنکو عوام کے سامنے پیش کیا جا رہا ہے چوہدری غلام ربانی مُسلم کانفرنس کے ٹکٹ پہ اگر الیکشن لڑتے ہیں تو یقینن ڈڈیال میں مسلم کانفرنس کا تگڑا ووٹ بینک ہے جو وہ لینے میں کامیاب ہوں گے اور کامیابی حاصل کرنے کی دوڑ میں شامل ہوسکتے ہیں جموں کشمیر یونائیٹد موومنٹ آزاد کشمیر میں نئی جماعت وجود میں آئی ہے چوہدری پہلوان سجاد اس جماعت کہ پلیٹ فارم سے ڈڈیال میں الیکشن لڑیں گے اس جماعت کے منشور عوام کو کافی اپیل کر رہا ہے نوجوانوں کی بڑی تعداد اس جماعت سے وابسطہ ہو رہی ہے یہ جماعت آزاد کشمیر میں بلدیاتی الیکشن کے انعقاد کی تحریک چلا رہی ہے تاکہ اقتدار عوام تک مُنتقل ہو اور عوام کے مسائل حل ہوں اور نچلی سطح سے قیادت اُبھر کر سامنے آئے یاد رہے اُمیدوار اسمبلی چوہدری پہلوان سجاد جو کہ پی ٹی آئی کو چھوڑ کر جموں و کشمیر یونائیٹد موومنٹ میں شامل ہوئے ہیں وہ بھی پی ٹی آئی کا اچھا خاصا ووٹ توڑیں گے دوسری طرف آزاد اُمیدوار چوہدری جہانگیر اکبر جو کہ پیپلز پارٹی سے اپنی تیس سالہ پُرانی رفاقت چھوڑ کر آزاد حیثیت سے الیکشن کے میدان میں اُترے ہیں اُن کی الیکشن کمپئین سے پتا چلتا ہے کہ وہ کوئی بڑا اپ سیٹ کر سکتے ہیں نوجوانوں کی بڑی تعداد جو دوسری پارٹیوں سے مایوس ہو کر چوہدری جہانگیر کے قافلے میں شامل ہو رہی ہے چوہدری جہانگیر اکبر کی جیت کیلئے پُر اُمید ہے ڈڈیال کے الیکشن میں درجنوں اُمیدوار ہونے کی وجہ سے ابھی تک کسی اُمیدوار کی کامیابی کا اس وقت فیصلہ تو نہیں کیا جا سکتا حتمی فیصلہ الیکشن کے دن ووٹ کی پرچی سے عوام کریں گے کے وہ اگلے پانچ سال کیلئے کس کو نمائندہ مُنتخب کرتے ہیں۔۔

Share.

Comments are closed.