ہر زندہ چیز نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے۔مولانا اقبال احمد قریشی

0

کلر سیداں(راجہ سعید+ملک صبور) ممتاز عالم دین مولانا اقبال احمد قریشی نے کہا ہے کہ ہر زندہ چیز نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے۔مرنے والے کا تعلق کسی بھی مذہب سے ہے، اس کے عزیز و اقارب اسے کسی نہ کسی رسم کیساتھ دنیا سے رخصت کرتے ہیں لیکن اہل ایمان کا طرہ امتیاز ہے کہ جب کوئی مومن دنیا سے جاتا ہے تو اسے نہ صرف دعاؤں کیساتھ رخصت کیا جاتا ہے بلکہ اسے رخصت کرنے کیلئے جتنے بھی طریقے اور مراحل ہیں اور جتنی منازل ہیں ، میت کیساتھ ساتھ ان مراحل سے گزرنے والے کو جو ہر اس رسم میں شریک ہوتا ہے ،اللہ اسے بھی ثواب عطا فرماتا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے کلر سیداں کے نواحی علاقہ مہیرہ سنگال میں مسلم لیگ (ن) یوتھ ونگ تحصیل کلر سیداں کے سابق صدر و ممبر ایم سی کلر سیداں خلیق احمد راجہ (مرحوم) کی ایصال ثواب کے سلسلہ میں منعقدہ روحانی محفل سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔مسلم لیگ (ن) کے چےئرمین راجہ محمد ظفر الحق، سابق رکن پنجاب اسمبلی محمود شوکت بھٹی،چےئرمین ایم سی کلر سیداں شیخ عبدالقدوس،وائس چےئرمین چوہدری محمد ضیارب منہاس،ارکان بلدیہ چوہدری اخلاق حسین، حاجی محمد اسحاق،جنید بھٹی،لطیف بھٹی،چےئرمین یوسی بھلاکھر راجہ صفدر کیانی، چےئرمین یوسی بشندوٹ زبیر کیانی، ماسٹر پرویز اختر قادری ،لیگی رہنما راجہ محمد افتخار آب پکھڑال سمیت سیاسی سماجی،کاروباری اور صحافتی حلقوں نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔اس موقع پر مولانا اقبال قریشی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دعا کرنا ہمار کام جبکہ ہماری دعا کو مقبولیت کا شرف بخشنا اللہ کا کام ہے ۔اللہ کا وعدہ ہے کہ کوئی جب مجھ سے دعا مانگتا ہے تو میں اس کی دعا کو قبول کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ مومن کے جانے کی جو کیفیت ہے اور اہل ایمان کا جو کسی مومن کو رخصت کرنے کا انداز ہے وہ رسم نہیں بلکہ عبادت کا درجہ رکھتی ہے۔شاہ و کدہ برابر ہیں اور موت کا وقت مقرر کر دیا گیا ہے جو نہ ایک لمحہ آگے نہ ایک لمحہ پیچھے ہو سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ خلیق احمد راجہ اپنے نام کی طرح خلیق تھے ۔اچھے کردار و اخلاق کے مالک تھے ہمیشہ مسکرا کر ملا کرتے ۔شمال سے مغرب تک سفر کریں تو قبرستان عظیم لوگوں سے بھرے پڑے ہیں،بڑے بڑے اختیار و اقتدار رکھنے والے پیوند خاک ہو گئے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ جب آپ اپنی منزل کا تعین کر لیتے ہیں تو دنیا دیکھتی ہے کہ وہ قبرستان میں جا رہا ہے مگر در حقیقت وہ جنت کے باغ میں داخل ہو رہا ہوتا ہے۔راجہ خلیق احمد کی رحلت ہم سب کیلئے پیغام ہے، ایک دم ان کا دنیا سے چلے جانا ہمیں یہ سبق سیکھاتا ہے کہ بس یہی ہے زندگی۔پیدائش سے لے کر جو موت تک کی زندگی ہے ہمارے آزمائش ہے ۔

Share.

Comments are closed.